img 1603120673 92

فرانس میں استاد کا سر قلم: مشتبہ شدت پسندوں کے گھروں پر چھاپے

فرانس میں اپنے شاگردوں کو پیغمبر اسلام کے متنازع خاکے دکھانے والے ٹیچر کا سر قلم کیے جانے کے واقعے کے بعد پولیس نے درجنوں مشبتہ اسلامی شدت پسندوں کے گھروں پر چھاپے مارے ہیں۔تفتیش میں شامل کیے جانے والوں میں سے کئی نے ہلاک کیے جانے والے ٹیچر سیموئل پیٹی کے قاتل کے حق میں پیغامات جاری کیے تھے۔حکومت کا کہنا ہے کہ وہ 51 مسلم تنظیموں کے خلاف بھی تحقیقات کر رہی ہے۔پولیس نے پیٹی کے مشتبہ قاتل کو جمعے کو پیرس کے ایک مضافاتی علاقے میں گولیاں مار کر ہلاک کر دیا تھا۔
فرانس کے وزیر داخلہ جیراڈ ڈارمینن نے کہا ہے کہ کئی مسلمان تنظیموں کو کالعدم قرار دے دیا جا سکتا ہے۔
انہوں نے کہا کہ ان کارروائیوں سے پیغام دیا جا رہا ہے کہ ملک کے ’دشمنوں کو چین نہیں لینے دیا جائے گا‘ اور یہ کارروائیاں پورا ہفتہ جاری رہیں گی۔

وزیر داخلہ نے کہا کہ 80 افراد سے پوچھ گچھ کی گئی ہے جن میں سے کئی نے پیٹی کے قاتل کے حق میں پیغام جاری کیے تھے۔
پولیس جن لوگوں سے پوچھ گچھ کر رہی ہے ان میں سے بعض کا تعلق مسلمانوں کی مختلف تنظیموں سے ہے جن میں اسلاموفوبیہ کے خلاف کام کرنے والی تنظیم ’کلیکٹو اگینسٹ اسلاموفوبیہ‘ بھی شامل ہے جس کے بارے میں حکومت کا خیال ہے کہ وہ فرانسیسی ریاست کے خلاف تشہیر کر رہی ہے۔
 

اپنا تبصرہ بھیجیں